Announcement

Collapse

Important Information

Assalamo Allaikum

Pegham is being relocated from it's current hosts to another host. This will disrupt services, until the new setup is ready.

The new setup will be a changed one: A new face and a new site, with forum as it is. So stay tuned and see the new site.

Admin
See more
See less

40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

Collapse
X
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی






    اگر اعمال اچھےتو حاکم اچھے اور اگر اعمال برے تو حاکم برے۔

    مشکوٰۃ ۔بحوالہ حلیہ ابی نعیم روایت کیا ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ فرماتاہے، کہ میں اللہ ہوں، میرے سوا کوئی معبود نہیں۔ میں سب بادشاہوں کا مالک اور بادشاہ ہوں۔ سب بادشاہون کے قلوب میرے ہاتھ میں ہیں، جب میرے بندے میری اطاعت کرتے ہیں، تو میں ان کے بادشاہوں اور حکام کے قلوب میں اان کی شفقت اور رحمت ڈال دیتا ہون۔ اور جب میرے بندے میری نافرمانی کرتے ہیں تو میں ان کے حکام کے دل سخت کردیتا ہوں وہ ان کو ہر طرح کا برا عذاب چکھاتے ہیں۔ اس لئے حکام اور امراء کو برا کہنے میں اپنے اوقات ضائع نہ کرو، بلکہ اللہ تعالیٰ کی طرف رجوع اور اپنے عمل کی اصلاح کی فکر میں لگ جاؤ ۔ تاکہ تمہارے سب کام کو درست کردوں۔(بحوالہ جلد اول صفحہ نمبر 26۔ حدیث نمبر 59، بکھرے موتی) ۔
    اسی طرح ابوداؤد نسائی میں حضرت عائشہ ( رضی اللہ تعالیٰ عنہا) سے روایت ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا "جب اللہ تعالیٰ کسی امیر اور حاکم کا بھلا چاہتے ہیں، تو اس کو اچھا وزیر اور اچھا نائب عطاء فرماتے ہیں، کہ اگر امیر سے کچھ بھول ہوجائے تو وہ اس کو یاد دلادے اور جب امیر صحیح کام کرے تو وہ اس کی مدد کرے اور جب کسی حاکم و امیر کے لئے کوئی برائی مقدر ہوتی ہے تو برے آدمیوں کو اس کے وزراء اور ماتحت بنا دیا جاتا ہے"۔ (معارف القرآن جلد3 صفحہ359)۔
    مقدمہ۔ دوستون مندرجہ بلا احادیث میں اللہ پاک نے اسبات کی وضاحت فرمادی، اس دنیا میں ہم جو کچھ بھی کرتے ہیں ، اچھے یا برے اعمال ، تو اللہ پاک ہم پر ایسے حکمران مسلط فرمادیتے ہیں، جو ظالم جابر اور بد اعمال ہوتے ہیں۔ اور ہماری ہی سوسائیٹی کے افراد ہوتے ہیں۔ اسکی مثال ایسی ہی ہے ، کہ ہم زمیں فصل کاشت کریں اور دانہ ڈالیں مکئی کا اور توقعہ کریں ، کہ فصل گندم کی ملے۔ جب قومیں اجتماعی طور پر اللہ تعالیٰ کی نافرمانی پر اتر آتی ہیں، ۔ اور برے کام کو برا نہں سمجھتیں، کم تولتی ، جھوٹ بولتی، اور بد اعمالیاں کرنے لگتی ہیں، تو اللہ پاک طرح طرح کے عذاب نازل فرماتا ہے۔ مثلا ۔ سیلاب آنا، بے موسم کے بارش ہونا، ۔ فصلون کا تباہ ہوجانا، بے گناہ افراد کا قتل ہونا۔

  • #2
    Re: 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

    jazakAllah :rose
    is thread main aap ahadees post kartay jaian :thmbup:
    اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
    اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

    Comment


    • #3
      Re: 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

      آپ دعا کرین اللہ پاک استقامت عطاء فرمائے۔

      Comment


      • #4
        Re: 40 Ahadees ...April Activity پیارے نبی کریمﷺ کی پیاری پیاری حدیثین






        بد بختی کی چار علامتین ہیں۔

        حضرت محمد ﷺ ۔ نے ارشاد فرمایا۔ بدبختی کی چار علامتین ہیں۔
        ۔ الیف: آنکھون سے آنسو کا جاری نہ ہونا۔
        ۔ب: دل کی سختی۔
        ۔ج: طول امل۔ یعنی لمبی لمبی امیدین باندھنا۔
        ۔د ؛ دنیا کی حرس۔
        ارشاد نبوی ﷺ ہے۔ اللہ سے استغفار کیا کرو۔ رونے سے دل کی سختی کم ہوتی ہے۔ اور دل میں گداز پیدا ہوتا۔ اسکے لئے ۔ اللہ پاک سے استغفار کرین، اپنی کوہتائیون
        پر نادم ہون۔ فرمایا ۔ رونا نہ بھی آئے ۔ تو رونے جیسی شکل بنا لین۔ اور اللہ کے ذکر سے اپنی زبانون کو تر رکھیں۔
        جو اللہ پاک نے عطاء کیا ہے اسپر صبر و شکر ادا کرین۔ کسی کے پاس اچھی چیز دیکھیں ، تو حسد و حرص نہ کریں۔ حرص اور ہوس کی وجہ سے آدمی غلط کام بھی کرتا،۔ اور دنیا سے رغبت زیادہ ہوتی ہے۔ آدمی مستقبل کے لمبی لمبی امیدیں وابسطہ کرلیتا ہے۔ اور اسکو پورا کرنے کے لئے، غلط کام کرنے پر مجبور ہوجاتا ہے۔ رشوت،دیگر غلط راسے اپناتا ہے۔
        اللہ پاک ہم سب کو صبر اور شکر والی زندگی گزارنے کی توفیق عطاء فرما۔ ( آمین، ثمہ آمین یا رب العالمین)۔
        • :pray:

        :pray:

        Comment


        • #5
          Re: 40 Ahadees ... /نمبر 5۔۔۔۔( دین کے پانچ اہم ارکان ہیں ) فاروق سعید قریشی





          نمبر۔5۔(دین کے پانچ ایم ارکان

          حضرت عبداللہ بن عمر (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) نبی اکرم ﷺ کا ارشاد نقل کرتے ہیں۔ کہ اسلام کی بنیاد پانچ ستونون پر ہے، سب سے اول الا الہٰ اِالاّ اللہ محمدٰرُرسول اللہ کی گواہی دینا یعنی اس بات کا اقرارکرنا کہ اللہ کے سواء کوئی معبود نہیں، اور محمدﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں اسکے بعد نماز کا قا ئم کرنا، زکوۃ ادا کرنا، حج کرنا، رمضان کے روزے رکھنا۔
          تشریٰح:۔ یہ پانچون چیزین ایمان کے بڑے اصول اور اہم ارکان ہیں۔ نبی اکرمﷺنے اس حدیث میں اسلام کو ایک خیمہ سے تشبیہ دی ہے، جو پانچ ستونون پر قائم ہوتا ہے، پس کلمہ شہادت خیمہ کی درمیانی لکڑی کی طرح ہے۔ اور ہقیہ چارون ارکان بمنزلہ ان چار ستونون کے ہیں۔ جو چارون کونون پر ہون۔ اگر درمیانی لکری نہ ہو تو خیمہ کھڑا ہو ہی نہیں سکتا، اور اگر یہ لکری موجود ہو اور چارون کونون میں کوئی سی لکری نہ ہو تو خیمہ تو قائم ہوجائے گا۔ لیکن جونسے کونے کی لکڑی نہیںہوگی وہ جانب ناقص اور گری ہوئی ہوگی۔
          اسلام کے پانچون ارکان نہایت اہم ہیں، حتیٰ کہ اسلام کی بنیاد انھیں قرار دیا گیا ہے۔ اور ایک مسلمان ہونے کی حیثیت میں ان سب کا احتمام نہایت ضروری ہے۔ مگر ایمان کے بعد سب سے اہم چیز نماز ہے۔ حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللی تعالیٰ عنہ کہتے ہیں، مین نے حضورﷺ سے دریافت کیا ۔ کہ اللہ تعالیٰ شانہُ کے یہان سب سے زیادہ محبوب عمل کونسا ہے۔ ارشاد فرمایا ۔ نماز ، ، میں نے عرض کی اسکے بعد، آپ ﷺ نے فرمایاوالدین سے ساتھ حسنِ سلوک ، اسکے بعد، ، ارشاد فرمایا جہاد، ۔ اور اسی طرح دیگر عوامل کی اہمیت اور خیروبرکت بیان فرمائی۔۔۔۔۔
          آئیے عہد کرین ، نماز قائم کرین گے، اور دیگر ارکان میں سب سے زیادہ آپ ﷺ نے نماز قائم کرنے پر زور دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ پاک ہم سب پر ہدایت کے دروازے کھول دے۔ اور باجماعت نماز پڑہنے کی توفیق عطاء فرماہے۔ ( آمین ، ثمہ آمین یا رب العالمیں)۔
          • :rose

          :jazak:

          Comment


          • #6
            Re: 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

            jazakAllah :rose
            اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
            اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

            Comment


            • #7
              Re: 40 Ahadees ... پیارے نبی کی پیاری پیاری حدیثین۔ فاروق سعید قریشی






              حدیث نمبر6۔
              حضور اقدس ﷺ کا ارشاد ہے کہ۔ حق تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں، ، کہ میں بندہ کے ساتھ ویسا ہی معاملہ کرتا ہون جیسا کہ وہ میرے ساتھ گمان کرتا ہے۔ اور جب وہ مجھے یاد کرتا ہے تو میں اسکے ساتھ ہوتا ہوں، پس اگر وہ مجھے دل میں یاد کرتا ہے تو میں اسکو اپٌنے دل میں یاد کرتا ہون، ۔ اور اگر وہ میرا مجمع میں ذکر کرتا ہے ۔ تو میں اس مجمع سے بہتر مجمع یعنی فرشتون کے مجمع میں (جو معصوم ہیں اور بےگناہ ہیں ) میں تذکرہ کرتا ہون۔ اگر بندہ میری طرف ایک بالشت متوجہ ہوتا ہے تومیں ایک ہاتھ اسکی طرف متوجہ ہوتا ہوں۔ اور اگر وہ ایک ہاتھ بڑھتا ہئے تو مین دو ہاتھ ادھر متوجہ ہوتا ہوں۔ اگر وہ میری طرف چل کر آتا ہے تو میں اسکی طرف دوڑ کر چلتا ہوں۔(فضائل ذکر صفحہ نمبر14)۔
              فائیدہ:۔ اس حدیث شریف میں کئی مضمون وارد ہوئے ہیں۔ اول یہ کہ بندہ کے ساتھ اس کے گمان کے موافق معاملہ کرتا ہون ، جس کا مطلب یہ ہے کہ حق تعالیٰ شانہُ سے اس کے لطف و کرم کی امید رکھنا چائیےاس کی رحمت سے ہرگز مایوس نہین ہونا چائیے۔ یقیننا ہم لوگ گنہگار ہیں اور سراپاہ گناہ اور اپنی حرکتون اور گناہون کی سزا ء
              اور بدلہ کا یقین ہے۔ لیکن اللہ کی رحمت سے بھی مایوس نہیں ہونا چائیے۔ کیا بعید ہے کہ اللہ تعالیٰ شانہ محض اپنے لطف کرم سےبالکل ہی معاف فرمادیں۔
              ساتھیوں۔ ہم نجانے دن میں جانے انجانے کتنے گناہ کرتے ہیں، اپنے ،ہاتھو ں پیروں سے آنکھون، زبان، سے جن کا ہمیں اندازہ بھی نہین ہوتا۔ ہمارا رب بڑا کریم، بڑا رحیم ہے۔ اگر انسان سچے دل سے اپنے گناہون پر نادم ہو، اور سچے دل سے پکارے تو اللہ پاک اپنے بندے کی فریاد سننے دوڑے چلے آتے ہیں۔ اس حدیث مبارکہ سے ظاہر ہوتا ہے۔ وہ سمیع و بصیر اللہ ہر وقت ہرجگہ، حاضر و ناضر ہے۔ اگر ہم دنیاوی کاموں کے ساتھ تھوڑا سا وقت اپنے پیارے رب کو منانے کے لئے روزانہ وقف کردیِں۔ اللہ پاک کو راضی کرلیں۔ اللہ پاک ہم پر اپنی نعمتون، رحمتون، برکتون کی بارش کردے گا۔



              Comment


              • #8
                Re: 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

                JazakAllah :rose
                اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                Comment


                • #9
                  Re: 40 Ahadees ... پیارے نبی کی پیاری پیاری حدیثین۔ فاروق سعید قریشی









                  • fire::rose









                  اخلاص والی نماز

                  حضرت ابوذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ، فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ نبی کریم ﷺ سردی کے موسم مین باہر تشریف لائے ، پتے درختون پر سے گر رہے تھے۔ آپ
                  نے ایک درخت کی ٹہنی ہاتھ میں لی اسکے پتے اور بھی گرنے لگے، آپﷺ نے فرمایا ائے ابو ذر مسلمان بندہ جب اخلاص سے اللہ کے لئے نماز پڑھتا ہے تو اس سے اس کے
                  گناہ ایسے ہی گرتے ہیں، جیسے یہ پتے درخت سے گر رہے ہیں۔
                  فائیدہ:۔ سردی کے موسم میں درختون کے پٌتے ایسی کثرت سے گرتے ہیں کہ بعضے درختون پر ایک بھی پتہ نہیں رہتا۔ نبی اکرمﷺ کا پاک ارشاد ہے کہ اخلاص سے نماز پڑھنے کا اثر بھی یہی ہے۔ کہ اس کئے سارے گناہ معاف ہوجاتے ہیں ایک بھی نہیں رہتا۔ مگر ایک بات قابل لحاظ ہے، علماء کی تحقیق آیات قرآنیہ اور احادیث نبویہ کی وجہ سے
                  یہ ہے۔ کہ نماز وغیرہ عبادات سے صرف گناہ صغیرہ معاف ہوتے ہیں، کبیرہ گناہ توبہ کے بغیرتوبہ کے معاف نہیں ہوتے ، اس لئے نماز کے ساتھ توبہ اور استغفار کا اہتمام بھی کرنا چائیے۔ اس سے غافل نہیں ہونا چائیے۔ البتہ حق تعالیٰ شانہ اپنے فضل سے کسی کے کبیرہ گناہ بھی معاف فرمادین تو دوسری بات ہے۔۔ (فضائل نماز/صفحہ 6)۔
                  دوستون اللہ پاک کی نظر میں ، بندے کا خالص ہونا اہمیت رکھتا ہے۔ اللہ کے حضور جب بھی عبادات کے لئے کھڑے ہوں تو نہایت ؑعاجزی کے ساتھ اپنی نیتون کا
                  اللہ پاک کے لئے خالص کر کے۔کھڑے ہوں۔ نماز کی نیت جب کرین، تو یہ تصور کریں۔ سامنے اللہ پاک موجود ہیں، سیدھے ہاتھ پٌر جنت کا دروازہ ہے۔ الٹے ہاتھ
                  کی طرف جہنم کو دروازہ ہے، اور میرے پپیچھے موت کے فرشتے کھڑے ہیں، اور یہ میری آخری نماز ہے۔۔۔ اللہ کی راہ میں جو بھی کام کریں ۔۔ اللہ پاک کے لئے
                  خالص اس ر ب العزت کی خوشنودی کے لئے کرین۔۔۔ اللہ پاک ہمیں اخلاص والی نماز پڑھنے کی توفیق عطاء فرمایے۔۔۔ آمین ، ثمہ آمین یا رب العالمین۔

                  • :rose











                  Comment


                  • #10
                    Re: 40 Ahadees ... پیارے نبی کی پیاری پیاری حدیثین۔ فاروق سعید قریشی






                    چالیس حدیثیں۔
                    حضرت سلمان رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں، کہ میں نے حضورِ اقدس ﷺ سے پوچھا کہ وہ چالیس حدیثین کیا ہیں، جن کے بارے میں آپ ﷺ نے فرمایا ہے ۔ کہ جو ان کو یاد کرلے جنت میں داخل ہوگا، حضور اقدسﷺ نے فرمایا۔ ان حدیثون کا یاد کرنے والا جنت میں بے روک ٹوک داخل ہوگا۔۔۔۔۔۔۔ 1۔ اللہ پر کامل یقین لائے۔ 2۔ آخرت کے دن پر ایمان لائے۔ 3۔ فرشتون کے وجود پر ایمان لائے۔ 4۔ سب آسمانی کتابون پر ایمان لائے۔5۔ تمام انبیاء پر ایمان لائے۔ 6۔ مرنے کے بعد دوبارہ زندگی پر ایمان لائے ۔ 7۔ تقدیر پر کہ بھلا اور برُا جو کچھ ہوتا ہے سب اللہ ہی کی طرف سے ہوتا ہے۔ پر ایمان لائے۔8۔ گواہی دے اس پر کہ اللہ کے سواء کوئی معبود نہیں۔ اور حضرت محمد ﷺ اللہ کے سچے رسول ہیں۔ 9۔ ہر نماز کےوقت کامل وضو کرکے نماز قائم کرے ( کامل وضو وہ کہلاتا ہے جس میں آداب مستجابات کی رعایت رکھی گئی ہو) اور ہر نماز کے لئے نیا وضو مستحب ہے۔ اور نماز کے قائم کرنے سے مرادیہ ہے کہ اس کے تمام ظاہری و باطنی آداب کا اہتمام کرے۔ 10 ۔ زکواۃ ادا کرے ۔11۔ رمضان کے روزے رکھے۔ 12۔ اگر مال ہوتو حج کرے، 13۔ بارہ رکعات سُنتِ مؤکدہ روزانہ اداکرے، صبح سے پہلے دو رکعت، ظہر سے قبل چار رکعت، ظہر کے بعد دو رکعت، مغرب کے بعد دو رکعت، اور عشاء کے بعد دود رکعت،۔ 14۔ وتر کسی رات میں نہ چھوڑے۔ 15۔ اللہ کے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ ٹھرائے۔16۔ والدین کی نافرمانی نہ کرے۔ 17۔ ظلم سے یتیم کا مال نہ کھائے۔ 18۔ شراب نہ پیئے۔19۔ زناء نہ کرے۔20۔ جھوٹی قسم نہ کھائے ۔21۔ جھوٹی گواہی نہ دے۔22۔ خواہشات نفسانیہ نہ کرے اور دور رہے۔ 23۔ مسلمان بھائی کی غیبت نہ کرے۔ 24۔ اور عفیفہ عورت یا مرد کو تہمت نہ لگائے۔25۔ اپنے مسلمان بھائی سے کینہ نہ رکھے۔26۔ لہو و لہب میں مشغول نہ ہو۔ 27۔ تماشائیون میں شریک نہ ہو۔ 28۔ کسی پستہ قد کو عیب کی نیت سے ٹھگنا نہ کہے۔ 29۔ کسی کا مذاق نہ اڑائے۔30۔ نہ مسلمانون کے درمیان چغل خوری نہ کرے۔31۔ اللہ جل شانہ کی نعمتون پر اس کا شکر ادا کرے ۔32۔ بلا اور مصیبت پر صبر کرے۔ 33۔ اللہ کے عذاب سے ڈررتا رہے۔ اور بے خوف نہ ہو،۔34۔ اعزہ میں قطع تعلق نہ کرو۔ 35۔ رشتہ دارون سے صلہ رحمی کا سلوک کرو۔36۔ اللہ کی کسی مخلوق کو لعنت نہ کرو۔ 37۔ سبحان اللہ ، اللہ اکبر، لا الہٰ الا اللہ کا کثرت سے ورد کرتے رہو۔ 38۔ جمعہ اور عیدین میں حاضری مت چھوڑو۔ 39۔ اس بات کا یقین رکھ کہ تکلیف اور راحت تجھے پہنچی ہے وہ مقدر مین تھی، جو ٹلنے والی نہ تھی۔ اور جو نہیں پہنچا وہ کسی طرح بھی پہنچنے والا نہ تھا۔ 40۔ کلا م اللہ کی تلاوت کسی حال میں مت چھوڑو۔
                    حضرت سلمان رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہتے ہیں ۔ میں نے پوچھا کہ جو کوئی ان کو یاد کرے اسے کیا اجر ملے گا۔ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ حق سبحانہ اس کا حشر انبیاء علیہم السلام اور علمائے اکرام کت ساتھ فرمائین گے۔

                    1. [*=right] دوستو ائیے کوشش کرین ۔ کہ نبی کریم ﷺ کی ان چالیس حدیثون کو اپنی روز مرہ کی زندگی کا جز بنا لیں۔ اور جنت میں جانے والے بن جائیں۔:rose

                    Comment


                    • #11
                      Re: 40 Ahadees ... فاروق سعید قریشی

                      jazakAllah :salam:
                      اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                      اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                      Comment

                      Working...
                      X