Announcement

Collapse

Important Information

Assalamo Allaikum

Pegham is being relocated from it's current hosts to another host. This will disrupt services, until the new setup is ready.

The new setup will be a changed one: A new face and a new site, with forum as it is. So stay tuned and see the new site.

Admin
See more
See less

صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔

Collapse
X
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔



    قاله ابن عباس،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن النبي صلى الله عليه وسلم

    یہ حدیث حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کی ہے۔



    حدیث نمبر: 3654

    حدثني عبد الله بن محمد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا أبو عامر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا فليح،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثني سالم أبو النضر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن بسر بن سعيد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن أبي سعيد الخدري ـ رضى الله عنه ـ قال خطب رسول الله صلى الله عليه وسلم الناس وقال ‏"‏ إن الله خير عبدا بين الدنيا وبين ما عنده فاختار ذلك العبد ما عند الله ‏"‏‏.‏ قال فبكى أبو بكر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فعجبنا لبكائه أن يخبر رسول الله صلى الله عليه وسلم عن عبد خير‏.‏ فكان رسول الله صلى الله عليه وسلم هو المخير وكان أبو بكر أعلمنا،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إن من أمن الناس على في صحبته وماله أبا بكر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ولو كنت متخذا خليلا غير ربي لاتخذت أبا بكر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ولكن أخوة الإسلام ومودته،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ لا يبقين في المسجد باب إلا سد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ إلا باب أبي بكر ‏"‏‏.


    مجھ سے عبداللہ بن محمد نے بیان کیا، کہا ہم سے ابوعامر نے بیان کیا، ان سے فلیح بن سلیمان نے بیان کیا، کہا کہ مجھ سے سالم ابوالنضر نے بیان کیا، ان سے بسربن سعید نے اور ان سے حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خطبہ دیا اور فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے ایک بندے کودنیا میں اور جو کچھ اللہ کے پاس آخرت میں ہے ان دونوں میں سے کسی ایک کا اختیار دیا تو اس بندے نے وہ اختیار کر لیا جو اللہ کے پاس تھا۔ انہوں نے بیان کیا کہ اس پر ابوبکر رضی اللہ عنہ رونے لگے۔ ابوسعید کہتے ہیں کہ ہم کو ان کے رونے پر حیرت ہوئی کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم تو کسی بندے کے متعلق خبردے رہے ہیں جسے اختیار دیا گیا تھا، لیکن بات یہ تھی کہ خود آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم ہی وہ بندے تھے جنہیں اختیار دیا گیا تھا اور (واقعتا) حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ ہم میں سب سے زیادہ جاننے والے تھے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ فرمایا کہ اپنی صحبت اور مال کے ذریعہ مجھ پر ابوبکر کا سب سے زیادہ احسان ہے اور اگر میں اپنے رب کے سوا کسی کو جانی دوست بناسکتاتو ابوبکر کو بناتا۔ لیکن اسلام کا بھائی چارہ اور اسلام کی محبت ان سے کافی ہے۔ دیکھو مسجد کی طرف تمام دروازے (جو صحابہ کے گھروں کی طرف کھلتے تھے) سب بند کر دیئے جائیں۔ صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔





    صحیح بخاری

    کتاب فضائل اصحاب النبی






  • #2
    Re: صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔

    Jazzak allah kahir

    Comment


    • #3
      Re: صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔

      subhanAllah

      Comment


      • #4
        Re: صرف ابوبکر رضی اللہ عنہ کا دروازہ رہنے دو۔

        Jazaka Allah khair....
        bahut umda r khoobsurat sharing hai bhia jan

        Comment

        Working...
        X