Announcement

Collapse

Important Information

Assalamo Allaikum

Pegham is being relocated from it's current hosts to another host. This will disrupt services, until the new setup is ready.

The new setup will be a changed one: A new face and a new site, with forum as it is. So stay tuned and see the new site.

Admin
See more
See less

Wasif Ali Wasif Quotes - واصف علی واصف کے اقوال

Collapse
X
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • Wasif Ali Wasif Quotes - واصف علی واصف کے اقوال

    Assalamalikum



    ﺳﺎﺋﻞ ﺑﮍﮮ ﺭﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮬﮯ....ﻭﮦ ﺑﻈﺎﮬﺮ ﮐﭽﮫ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ
    ﮐﮯ ﻟﺌﯿﮯ ﺁﺗﺎ ﮬﮯﻟﯿﮑﻦ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺁﺗﺎ
    ﮬﮯ ﮬﻢ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﮯ! ﮬﻢ ﻏﺎﻓﻞ ﮬﻮﺗﮯ ﮬﯿﮟ
    ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﺱ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﺭﮬﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﺟﻮ ﺻﺮﻑ
    ﺳﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﮬﻢ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ ﮬﮯ....
    ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮬﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺋﻞ ﮬﻤﯿﮟ ﻣﻼ....ﯾﮧ ﺍﻥ
    ﺩﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮬﮯ ﺟﺐ ﮈﯾﭙﺮﯾﺸﻦ ﺳﮯ ﮬﻤﺎﺭﯼ ﻧﺌﯽ ﻧﺌﯽ
    ﺁﺷﻨﺎﺋﯽ ﮬﻮﺭﮬﯽ ﺗﮭﯽ، ﺍﯾﮏ ﺷﺎﻡ ﮬﻢ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﻍ ﻣﯿﮟ
    ﺗﻨﮩﺎ ﻏﻮﺭ ﮐﺮ ﺭﮬﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺋﻞ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ
    ﺁﺗﺎ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮬﯽ ﺍﺳﮯ ﻧﺎ ﭘﺴﻨﺪ
    ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ...ﻭﮦ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﮯ ﻧﯿﺎﺯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ
    ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﻮﮞ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ " ﺳﺎﺋﻞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ
    ﺗﻮﺟﮧ ﺗﻮ ﮐﺮﻧﯽ ﭼﺎﮬﯿﮯ ..."ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮬﺘﮯ
    ﮬﻮ؟ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﮬﻤﺮﺍ ﺗﻮ ﻭﮬﯽ ﺳﻮﺍﻝ ﮬﮯ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﮐﮧ....ﻣﺪﺩ
    ﮐﺮﻭ! ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺪﺍﺯِ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﮯ ﺍﺛﺮ
    ﻣﯿﮟ ﺁﺗﺎ ﮔﯿﺎ، ﺍﭘﻨﯽ ﺟﯿﺐ ﺳﮯﺍﯾﮏ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭘﮯ ﮐﺎ ﻧﻮﭦ ﻧﮑﺎﻻ
    ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ " ﻗﺒﻮﻝ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮯ ..." ﺑﺎﺑﺎ ﻧﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﺳﮯ
    ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮬﻮﮞ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ
    ﺳﻨﻮ .....ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮔﯿﺎ ﮬﻮﮞ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ
    ﺗﻢ ﺟﺲ ﮐﻮ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﺭﮬﮯ ﮬﻮ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﭼﮭﮯ
    ﺩﻭﺭ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮬﮯ، ﺟﺐ ﯾﻮﺳﻒ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﻣﯿﮟ
    ﮔﺮﺍﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻧﺌﮯ
    ﺳﻔﺮ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮬﮯ....ﭘﯿﻐﻤﺒﺮﯼ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ، ﺑﺎﺩﺷﺎﮬﺖ ﮐﺎ
    ﺳﻔﺮ....ﺟﮩﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺭ ﺧﺘﻢ ﮬﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﺳﮯ
    ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﻭﺭ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮬﻮﺗﺎ ﮬﮯ...ﺑﺎﺑﺎ ﺑﻮﻟﺘﺎ ﺟﺎﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ
    ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﺟﺎﻻ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﺭﮬﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﭽﮫ
    ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎ ﺭﮬﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﻮ ﺻﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﮬﯽ ﺟﺎﻧﺘﺎ
    ﺗﮭﺎﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﭼﺎﮦ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺑﻮﻟﺘﮯ ﮬﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ
    ﭼﭗ ﮬﻮ ﮔﺌﮯ..ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﺰﯾﺪ ﺍﺭﺷﺎﺩ " ﺑﻮﻟﮯﻧﮩﯿﮟ! ﻣﯿﮟ
    ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﯿﻮﮞ؟ ﺑﻮﻟﮯﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺗﯿﺮﯼ ﺟﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮮ ﺩﻭ
    ﺳﻮ ﺭﻭﭖ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺻﺮﻑ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭘﮯ
    ﺗﮭﮯﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﻠﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺍﺗﻨﺎ ﮬﯽ
    ﺣﺼّﮧ ﮬﮯ...ﭘﮫ ﺑﺎ ﺑﺎ ﻧﮯ ﺟﯿﺐ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻨﮩﺮﺍ ﮐﺎﺭﮈ ﻧﮑﺎﻝ
    ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﭘﺘﮧ ﻟﮑﮫ ﺩﮮ...ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﺘﮧ
    ﻟﮑﮭﺎ ﺩﺳﺘﺨﻂ ﮐﺮ ﺩﺋﯿﮯ...ﺑﺎ ﺑﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ،
    ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻞ ﭘﮍﺍ ﻟﯿﮑﻦ ..ﺑﺎﺑﺎ ﻏﺎﺋﺐ ﮬﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ
    ﺍﻭ ﮈﯾﭙﺮﯾﺸﻦ ﺧﺘﻢ ﮬﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ...
    ﺑﺎﺕ ﯾﮩﺎﮞ ﺧﺘﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﻮﺋﯽ ...ﭘﻨﺪﺭﮦ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ ﺳﻘﻮﻁِ
    ﮈﮬﺎﮐﮧ ﭘﺮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﮈﯾﭙﺮﯾﺸﻦ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮬﻮﺍ ﺍﯾﮏ ﺷﺎﻡ ﺑﻌﺪ
    ﻧﻤﺎﺯ ﻣﻐﺮﺏ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﺰﺭﮒ
    ﺻﻮﺭﺕ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻣﯿﺮﮮ ﺁﮔﮯ ﭼﻞ ﺭﮬﺎ ﮬﮯ...ﻟﻤﺒﮯ ﺑﺎﻝ ...ﻧﻨﮕﮯ
    ﭘﺎﺅﮞ ..ﮬﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﺴﺒﯿﺢ...ﮐﭽﮫ ﺁﮔﮯ ﭼﻞ ﮐﺮ ﻣﮍﺍ ﺍﻭﺭ
    ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮬﻮﺍ" ﺳﺎﺋﻞ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺟﮭﮍﮐﯽ ﻧﮧ ﺩﯾﻨﺎ...ﮬﻢ
    ﻟﻮﮒ ﻣﺤﺴﻦ ﮬﯿﮟ ..ﻣﻌﻠّﻢ ﮬﯿﮟ...ﮬﻤﺎﺭﯼ ﺷﮑﻞ ﻭ
    ﺻﻮﺭﺕ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﮬﻮ ﮬﻢ ﻭﮬﯽ ﮬﯿﮟ...ﮬﻤﺎﺭﺍ ﭼﻮﻻ
    ﺑﺪﻟﺘﺎ ﺭﮬﺘﺎ ﮬﮯ...ﮬﻢ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺁﺗﮯ
    ﮬﯿﮟ...ﮬﻢ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﺎﻧﮕﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ
    ﺑﺨﯿﻞ ﮬﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭻ ﺳﮑﻮ، ﮬﻢ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺳﺨﯽ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ
    ﻟﺌﮯ ﺁﺗﮯ ﮬﯿﮟ.....ﺳﺨﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺩﻭﺳﺖ ﺻﺮﻑ ﺳﺎﺋﻞ ﮐﮯ
    ﺩﻡ ﺳﮯ ﮬﮯ! ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺟﯿﺐ ﺳﮯ ﮐﺎﺭﮈ ﻧﮑﺎﻻ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ
    ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﭘﺘﮯ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺩﻭ...ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻠﮯ ﺯﻣﯿﻦ
    ﻧﮑﻞ ﮔﺌﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﮬﯽ ﮐﺎﺭﮈ ...ﻣﯿﺮﺍ ﮬﯽ
    ﻧﺎﻡ ..ﻣﯿﺮﺍ ﮬﯽ ﭘﺘﮧ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﮬﯽ ﮬﺎﺗﮫ ﮐﺎ ﻟﮑﮭﺎ
    ﮬﻮﺍ....ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﭘﮭﯿﻞ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﺎ
    ﻏﺎﺋﺐ ﮬﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ " ﮐﺎﺭ ِ ﺳﺎﺯِ ﻣﺎ ﻓﮑﺮِ ﮐﺎﺭِ ﻣﺎ .... "ﺁﺝ ﺗﮏ
    ﻭﮦ ﺑﺎﺑﺎ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮬﮯ
    ﻣﻌﻠّﻢ ...ﻣﺤﺴﻦ....ﺑﺨﯿﻞ ﮐﻮ ﺳﺨﯽ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ....ﻏﯿﺮ ﺍﻟﻠﮧ
    ﮐﻮ ﺣﺒﯿﺐ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ....ﺟﮭﮍﮐﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻧﮩﯿﮟ..ﺍﺩﺏ
    ﺍﻭﺭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺳﮑﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺁﺗﺎ ﮬﮯ ...ﮬﻤﺎﺭﮮ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ
    ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﺩﺳﺘﮏ ﺩﯾﺘﯽ ﮬﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺘﯽ ﮬﮯ"
    ﺧﺒﺮﺩﺍﺭ ﻏﺎﻓﻞ ﻧﮧ ﮬﻮﻧﺎ

    ﻭﺍﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﻭﺍﺻﻒ


  • #2


    کچھ لوگ انتظار کی شدت سے تنگ آ کر چراغِ آرزو بجھا دیتے ہیں ۔ وہ امید سے نکل کر مایوسی میں داخل ہو جاتے ہیں ۔ وہ کسی پر بھروسہ نہیں کرتے ۔ انہیں اپنے نصیب پر بھی بھروسہ نہیں رہتا ۔ وہ گلہ کرتے ہیں ، شکایت کرتے ہیں ، مایوسیاں پھیلاتے ہیں ۔ انہیں شبِ فرقت کی تاریکی تو نظر آتی ہے ، اپنے دل کا نُور نہیں نظر آتا ۔ وہ جس خوبی کا انتظار کرتے ہیں ، اسے ناخوب کہنے لگ جاتے ہیں ۔ وہ اپنے جدا ہونے والے محبوب کو کوسنا شروع کرتے ہیں اور اس طرح اپنی شبِ انتظار کو کم نصیبی سمجھ کر بے حس اور جامد ہو جاتے ہیں ۔ ظاہر سے محروم ہو کر وہ باطن سے بھی محروم ہو جاتے ہیں اور اس طرح بربادئ دل بربادئ ہستی بن کر انہیں تباہی کی منزل تک لاتی ہے
    جس شخص میں ایثار نہ ہو، اسے انتظار تباہ کر دیتا ہے ۔ جس انسان میں عفو و درگزر نہ ہو ، اسے انتظار ہلاک کر دیتا ہے ۔ اگر تمنا ہوس پرستی بن جائے ، تو انتظار عذاب ہے!

    (کتاب ۔۔۔۔۔۔۔ دل دریا سمندر)
    (مضمون ۔۔۔۔۔۔ انتظار)
    (مصنف۔۔۔۔۔۔ حضرت واصف علی واصف رحمتہ اللہ علیہ)

    Comment


    • #3

      ”عین ممکن ھے کہ کوئی محفل میں اکیلا ھو اور عین ممکن ھے کہ کسی کی تنہائی میں رونق ہو“ یہ ضرور دیکھیں کہ آپ کے پاس خیال کی آسانی کتنی ھےاللہ تعالیٰ سے دعا مانگا کریں کہ اے میرے مالک! تو نے مجھے اچھے رزق سے نوازا ھے،
      تو نے مجھے اچھی شکل دی ھے، میرے مالک! مجھ پر کرم فرما، مجھے اچھی سوچ بھی عطا فرما مجھے ایسی سوچ دے کہ میری تنہائیوں میں میلہ لگے، میری روح سجدہ کرے _____!!!

      Comment


      • #4
        اپنے حال پر افسوس کرنا، اپنے آپ پر ترس کھانا، اپنے آپ کو لوگوں میں قابل رحم ثابت کرنا الله کی نا شکر گزاری ھے۔۔۔
        الله کسی انسان پر اس کی برداشت سے زیادہ بوجھ نہیں ڈالتا۔۔۔
        بیمار اور لاغر روحیں ہمیشہ گلہ کرتی ہیں اور صحت مند ارواح شکر۔۔۔
        زندگی پر تنقید، خالق پر تنقید ھے اور یہ تنقید ایمان سے محروم کر دیتی ھے۔
        واصف علی واصف

        Comment


        • #5

          جن لوگوں کا مزاج نفرت ہو،
          اُن کو محبوب کا راستہ نہیں ملا کرتا ۔ ۔ ۔
          جس کا مزاج محبت ہے ، وہ خود ہی محبوب کو ڈھونڈ لے گا
          حضرت واصف علی واصف رحمتہ اللہ علیہ
          Never stop learning
          because life never stop Teaching

          Comment


          • #6

            جو چیز خواہش میں ہو اور دسترس میں نہ ہو تو یا تو اپنی دسترس بڑھا لو یا پھر خواہش مختصر کر لو...
            واصف علی واصف.

            Comment

            Working...
            X