Announcement

Collapse
No announcement yet.

Mara Intekhaab

Collapse
X
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • Re: Mara Intekhaab

    یہ میرا شہر صحرا صفت۔۔!
    ۔
    اجنبی دیکھنا یہ وہی شہر ہے
    یہ مرا شہر صحرا صفت دشت خو
    جس کے رستوں کی مٹی مری آبرو
    جس کی گلیاں لکیریں میرے بخت کی
    جس کے ذرے مہ ہ مہر سے قیمتی!
    ۔
    ۔
    یہ وہی شہر ہے ۔۔۔۔۔۔اجنبنی دیکھنا
    جس کی چاہت کی تعزیر میں عمر بھر
    میری آوارگی کے فسانے۔۔۔۔بنے
    جس کی خاطر مرے ہم سخن ہمسفر
    بے سبب تہمتوں کا نشانہ بنے!
    جس کی بخشش کی تاثیر کے ذائقے
    میری تشہیر کو تازیانے بنے
    مری دیوانگی نے تراشا جنہیں
    وہ سیہ پوش لمحے زمانے بنے
    ۔
    ۔
    اجنبی دیکھنا یہ وہی شہر ہے
    جس کی جلتی ہوئی دوپہر میں سدا
    خواب بنتی رہی نوجوانی مری
    جس کے ہر موڑ پر راکھ کے ڈھیر میں
    دفن ہوتی رہی ہر کہانی مری
    ۔
    ۔
    جس کی پرہول راتوں کی محراب میں
    میری غزلوں کے خورشید جلتے رہے
    جس کی یخ بستہ صبحوں کے اصرار پر
    میرے آنسو شرارروں میں ڈھلتے رہے
    ؛

    ۔
    یہ وہی شہر ہے جس کے بازار میں
    بار ہا میرا پندار بیچا گیا
    موسم قحط کو ٹالنے کے لیے
    مرے دامن کا ہر تار بیچا گیا
    ÷
    ÷

    ÷
    اجنبی دیکھنا۔۔۔۔۔۔دیکھنا اجنبی
    اپنے صحرا صفت شہر میں اج پھر
    میں دریدہ بدن میں بریدہ قبا
    دربدر خواہشوں کی کٹی انگلیاں
    ریزہ ریزہ ماہ و سال کے ذائقے
    ہانپتے کانپتے دل کی شوریدگی
    عمر بھی کی کمائی ہوئی شہرتیں
    لمحہ لمحہ سلگتی زندگئ
    ناچتی تہمتوں کی کھلی وحشتیں
    لب پہ مجروح لفظوں کی چبھتی تھکن
    تن پہ یاقوت زخموں کے تمغے لیے
    سوچتا ہوں کہ ہاں۔۔۔یہ وہی شہر ہے
    جس سے منسوب تھا میرا نام و نسب
    میرا فن میری تخلیق میرا ادب
    شورش چشم نم ۔۔۔نوحہ زیر لب
    سب اسی شہر صحرا صفت کے لیے
    ۔
    ۔
    ۔
    میں مگر اج اس شہر کی بھیڑ میں
    صورت موج صحرا اکیلا بہت
    میرے چہرے پہ کوئی گواہی نہیں
    کچھ بھی ھاصل مرا جز تباہی نہیں
    ÷
    ÷
    ÷
    یوں بھی ہے کل جہاں میں تھا مسند نشیں
    اُس جگہ خیمہ زن اب نئے لوگ
    خود سے آباد کر قریہ شب مجھے
    کوئی پہچانتا ہی نہیں اب مجھے
    ÷
    ÷
    ÷
    ÷
    دل میں چھبتی ہوئی درد کی لہر ہے
    میرے سچ کا صلہ ساغر زہر ہے
    سانس لینا یہاں جبر ہے قہر ہے
    اجنبی دیکھنا یہ وہی شہر ہے

    یہ وہی شہر ہے÷÷۔۔۔۔۔۔!
    Last edited by Dr Faustus; 6th November 2015, 18:59.
    :(

    Comment





    • لوگ میلوں میں بھی گم ہو کر ملے ہیں بارہا
      داستانوں کے کسی دلچسپ سے اک موڑ پر...!


      یوں ہمیشہ کے لیے بھی کیا بچھڑتا ہے کوئی..؟


      :(

      Comment


      • Dr Faustus
        Dr Faustus commented
        Editing a comment
        dil jaly........sabhi dil jalay hai haha

      • Dr Faustus
        Dr Faustus commented
        Editing a comment
        dil jaly........sabhi dil jalay hai haha

      • crystal_thinking
        crystal_thinking commented
        Editing a comment
        Kia karen bichreny walon ki wapsi ka imkan baki na rhy tu dil jal he jaty hen... lkn apas ki bat hy ham chalay zamana jalay ;-)

    • نوے کی دہائی میں جون ایلیا کے بارے میں انکشاف ہوا کہ وہ اردو تاریخ کی ایک عظیم ترین نظم نئی اگ کا عہد نامہ کے نام سے لکھ رہے ہیں۔۔خود جون ایلیا صاحب کا کہنا تھا کہ اس نظم میں انہوں نے خدا سے پنجہ آزمائی کی ہے۔۔۔واحسرتا یہ نظم تکمیل نا پاسکی لیکن اس نظم جس جو راموز کا نام دیا گیا گزشتہ سال خالد انصاردی صاحب نے ایک کتاب کی شکل میں شائع کروائی۔۔۔اس نظم کو چھوٹی اٹھارہ ٹکریوں میں تقسیم کیا گیا جن کو الواح کا نام دیا گیا ہے۔۔۔۔جون نے یہ نظم عہد نامہ قدیم سے متاثر ہوکے لکھی

      راموز میں سے ایک لوح یہاں لگاتا باقی بھی ساتھ ساتھ پوسٹ کروں گا



      Click image for larger version

Name:	13237793_10153493110696363_5181748436278712954_n.jpg
Views:	1
Size:	83.0 KB
ID:	4276011

      :(

      Comment


      • crystal_thinking
        crystal_thinking commented
        Editing a comment
        Acha tu ap iska tazkara kar rhy thy... dekhty hen... abi tu kuch log hen jo hamari khud garzi or be hisi ki wja sy mar rhy kuch unk liye kr len phr aty hen jaun k pass b....

      • Dr Faustus
        Dr Faustus commented
        Editing a comment
        koun sa log?

    • سی ٹی کی نذر

      لو جی یہ غزل اس کا مقطع لگتا سی ٹی کے لیے بنا تھا میں بہت دن سے اسے تلاش کر رہا تھا ،،میرے ذہن میں تھا یہ شاید سید ضمیر جعفری کی غزل ہے ۔۔ضمیر جعفری کی کتابوں سے ڈھونڈتا رہا پھر اج یاد ایا نہیں یار یہ ضیا الحق قاسمی کی تھی بہت سال پہلے میں نے پڑھی تھی اس کا مقطع کا ایک جملہ ذہن میں اٹک گیا تھا۔۔لیکن گوگل پہ بھی ڈھنوڈنے سے نہ ملی لیکن اج وقت کی زنبیل طلسمی سے یہ برامد کر ہی لی



      جب بھی تجھے دیکھا،کسی بحران میں دیکھا
      نسیاں میں دیکھا،کبھی ہزیان میں دیکھا

      رس گنے کا پینے کو ملا خوب ہمیں بھی
      یہ فائدہ دیکھا ہے تو یرقان میں دیکھا


      کہتے ہین کہ لیلی کا تعلق تھا عرب سے
      یہ رنگ تو افریقہ و مکران میں دیھکا


      وہ چور تھا یا عاشق دلگیر کسی کا
      دیوار پہ چڑھتے جساے دالان میں دیکھا


      جب بھی تجھے دیکھا۔۔۔کسی بحران میں دیکھا
      Last edited by Dr Faustus; 8th October 2016, 15:02.
      :(

      Comment


      • crystal_thinking
        crystal_thinking commented
        Editing a comment
        Yani logo ko pehly sy he hamary halat ki khabar the... bari he koi panoti wajood hon b mae tu :p

    • Wah wah wah khoooooob asat kamal
      Originally posted by Dr Faustus
      Re: Mara Intekhaab<br />
      <br />
      ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭غزل٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
      <br />
      <br />
      زندانِ دو جہان کی ۔۔۔۔ وُسعت میں قید ھُوں
      کِس کو خبر مَیں کس کی محبت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      دیکھ اے اسیرِ وقت تُو ضائع نہ کر مُجھے
      مَیں بھی پلک جھپکنے کی ساعت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      پنجرے سمیت اُڑنا بھی مُشکل نہیں مُجھے
      مَیں تو ذرا بدن کی مُروت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      صدیوں سے مَیں اَسیرِ خلا تھا ، رِھا ھُوا
      اب کہکشاں کے جُرمِ بغاوت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      اللہ کرے کہ قیدی پرندوں کی خیر ھو
      مَیں بھی یہاں پروں کی ضرورت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      آدھا اِدھر پڑا ھُوں بدن کے نشیب میں
      آدھا مَیں لامکاں کی عمارت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      چیخیں ھیں یہ مری کہ مرے قہقہے ھیں یہ
      دھشت میں قید ھُوں کہ مَیں وحشت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      گِننے میں کیا ثواب ، نہ گِننے میں کیا گناہ
      کب سے نگاہِ یار کی غفلت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      لگتا ھے جیسے رنگ و مَہک ھے ترا بدن
      لگتا نہیں کہ جسم کی شہوت میں قید ھُوں
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      اِس زاوئیے سے دیکھنا ممکن نہیں ابھی
      صُورت میں قید ھُوں نہ مَیں سِیرت میں قید ھُوں
      Last edited by Masood; 11th October 2016, 09:45.
      میں نعرہ مستانہ، میں شوخی رندانہ

      Comment


      • نیند سے پہلے

        ٹوٹتے نشے کی تلخی ہے ابھی تک باقی
        دکھ سے بھرپور ہیں یہ تند چھلکتے ہوئے جام
        جگمگاتے نہیں، ہنستے نہیں،اب رنگ محل
        دب گیا نید کی بانہوں میں کوئی حشر خرام

        سیمگوں خواب بسرنے لگے افسانہ ہوئے
        چاند نے جوبوئیں تھیں جو کرنیں وہ مرجھا بھی گئیں
        سو گئیں خاک پہ شبنم کے طمانچے کھا کر
        کلیاں جو کھلنے ہی والی تھیں وہ کمھلا بھی گئیں
        گردش ارض میں گھل جائوں گا کھو جائوں گا
        جم کے رہ جائے گا امید کی پلکوں پہ لہو
        جھک کے رہ جائے گی سنگ در جاناں پہ جبیں
        میرے بوسیدہ لبادے میں رہے گی نہ سکت
        ماہ و سال اور لگا دیں نیا پیوند کہیں


        اشک بہہ جائیں گے آثار سحر سے پہلے
        خون ہو جائیں گے ارمان اثر سے پہلے
        سرد پڑ جائیں گی بجھتی ہوئی آنکھوں کی پکار
        گرد برسوں کی چھپا دے گی مرا جسم نزار
        جاگتے جاگتے تھک جائوں گا ۔۔سو جائوں گا
        :(

        Comment


        • میں اب ہر شخص سے اُکتا گیا ہوں
          فقط کچھ دوست ہیں اور دوست بھی کیا

          پڑے ہیں ایک گوشے میں گماں کے
          بھلا ہم کیا، ہماری زندگی کیا ؟
          :(

          Comment


          • welsaid thanx for sharing

            Comment

            Unconfigured Ad Widget

            Collapse

            pegham Youtube Channel

            Collapse

            Working...
            X